Rooh Ka Sakoon Episode 4

 اوزکان نے ایک بار پھر ُاس سیاہ فام۔کی طرف دیکھا جو ُاسے کہی سے بھی ابنارمل نہیں لگ رہا تھا ۔بلکہ وہ ابھی بھی ُاس کے پیچھے کھڑی ملائکہ کو دیکھ رہا تھا

اوزکان نے ُاسے کوئ جواب نہیں دیا بلکہ وہ سیاہ فام ُاسے بازوں سے پکڑتا اپنی زبان میں کچھ کہتا ہوا لے گیا۔
ملائکہ جو ِاس دوران بلکل ہونقوں کی طرح ُان دونوں کو دیکھ رہی تھی ۔اپنے آپ کو کوسنے لگی۔
“نو نو ملائکہ تو ابھی سے ڈبوسی بن گئ ہے تجھے ندڑ بننا ہے ہر جگہ تو یہ تجھے بچانے نہیں آۓ گا نہ ۔
“excuse me mam!!.
میں کافی دیر سے لائین میں لگا ہوا ہوں مجھے بلیک ٹی لینی ہےآپ نے اگر لیے لی ہے تو کیا آپ راستہ دے گی محترمہ  “۔اوزکان صالیح نےاپنے ہاتھ کی قیمتی گھڑی پہ نظر دوڑاتے ہوۓبھینچے ہوں لبوں سے ُاسے ایسے ظاہر کیا جیسے وہ یہاں قہوہ لینے ہی آیا تھا ۔ملائکہ نے ُاس مغرور شہزادے کو دیکھا جو ُاس کی طرف نظر ُاٹھا کر بھی نہیں  دیکھ رہاتھا۔
“جی”۔ملائکہ نے مدھم۔آواز۔میں کہا اور واپس اپنی ِسیٹ پہ آکر بیٹھ گئ پھر تمام۔سفر میں ملائکہ نے انتہائ  شرافت سے اپنا سفرسوکر گزارا ۔
“سر جہاز لینڈ کرنے والا ہے میم۔کو ُاٹھا کے کہے ِسیٹ بیلٹ باندھے “۔ایئر ہوسٹس پیشوارانہ انداز میں اوزکان صالیح کو بولتی ہوئ چلی گئ۔اوزکان نے ِسلیپنگ بیوٹی کی جانب دیکھا جو گہری نیند میں خواب خرگوش کے مزے ُلوٹ رہی تھی اوزکان کا دل چاہا کے ُاسے ُاٹھاۓ مگر ُاس کی نیند خراب نہ ہو اوزکان نے نہایت آہستہ سے ُاس کی ِسیٹ بیلٹ نکال کر ُاسے باندھ دی۔

“کچھ دیر بعد, “میم آپ اپنی منزل پہ پہنچ ُچکی ہے آپ پلیز ُاٹھ جائیے “۔ائیر ہوسٹس ملائکہ کو ُاٹھانے لگی, ملائکہ نے ہڑبڑا کےپہلے اپنے برابر میں پھر ائیر ہوسٹس  کو دیکھا اور افوس کرتی اپنا سامان ُاٹھانے لگی ساتھ ہی ساتھ خود کو ملامت کرنے لگی کیا ضرورت تھی خود کو ہیروئین سمجھنے کی وہ کیوں مجھے ُاٹھا کے مل۔کے جاتا میں بڑی ُاس کی کوئ سہیلی تھی جس سے ِملے بغیر ُاس نے جانا نہیں تھا ۔ملائکہ نےایک لمبی سانس کھینچھی اور باہر کی جانب بڑھ گئ۔
مانچسٹر ایئر پوڑٹ سے باہر نکلتے ہوۓ ایک عجیب طرح کی خوشی تھی ُاس کے چہرے پہ, اپنے خاندان کی وہ پہلی لڑکی تھی جو اپنے ملک سے باہر



 پڑھنےکے لیے آئ تھی  ملائکہ زندگی میں پہلی بار انگریزوں کو اپنے سامنے چلتا پھرتا دیکھ کر خوش ہورہی تھی جیسے ُاس نے پہلے کبھی ایسی خلائ مخلوق نا دیکھی ہو۔اسی دوران ملائکہ کو پتہ ہی نہ چلا کب وہ مین سڑک پر چلتی ہوئ آگئ ۔
اچانک سامنے سے ایک تیز رفتار کار آگئ ملائکہ۔کو لگا اب ُاس کا بچنا نا ممکن ہےُاس نے اپنی آنکھیں زور سے میچ لی ۔
اچانک کسی نے ملائکا کاہاتھ پکڑ کے پیچھے کی جانب کھینچا اور ُاسے اپنے حصار میں لیا۔
“جب سڑک کراس کرنی نہیں آتی تو گھر سے اتنی دور نکلتی کیوں ہو باہر۔
اگر میں ایک لمحہ  بھی دیر کرتا نہ تو تم مانچسٹر کی گلیوں میں لولی لنگڑی بن کے ُگھوم رہی ہوتی”۔اوزکان صالیح ملائکا پہ برھم ہواجو ایئرپورٹ کے باہر کھڑا اپنے ڈڑائیور کا انتظار کررہا تھا جب ُاسے وہ نظر آئ تو وہ ُاس کی جانب بھاگا۔
“اب ُگھور کیوں رہی ہو چلو “۔وہ ملائکا کا ہاتھ تھام کے روڈ کراس کرنے لگا 

About admin

Check Also

Thirst of Billionaire episode 2

 Shaukat finally confessed, feeling burdened by their mistreatment. “I’ve seen them,” he said. “But it’s …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *